نیب کا لاہور میں بڑا چھاپہ! کس کے گھر سے کروڑوں روپے برآمد کر لیے گئے ؟ ہر کسی کے لیے یقین کرنا مشکل

لاہور(نیوز ڈیسک ) لاہور محکمہ ایکسائر کے سابق ملازم کے گھر سے 33 کروڑ روپے برآمد کیے گئے ہیں،تحقیقات میں ملزم خواجہ وسیم کی اہلیہ کے نام 19 کروڑ سے زائد کیش و پرائز بانڈ ہونے کے بھی شواہد مل گئے۔ تفصیلات کے مطابق چیئرمین نیب کے بدعنوان عناصر کے خلاف قانون کے مطابق اور بلا امتیاز کارروائی کے احکامات پر عملدرآمد ہونے لگا ۔ملزم خواجہ وسیم کے خلاف جاری آمدن سے زائد اثاثہ جات کیس کی تحقیقات میں بڑی پیش رفت سامنے آگئی۔

محکمہ ایکسائیز اینڈ ٹیکسیشن لاہور کے گریڈ 16 کے سابقہ ملازم کے گھر سے 33 کروڑ کیش و پرائیز بانڈز کی صورت میں برآمد کر لیے گئے۔انٹیلی جنس ونگ کی بڑی کامیابی سے ملزم کے خلاف جاری تحقیقات نے نیا موڑ لے لیا۔سابق انکم ٹیکس انسپکٹر کا گھر میں چھپایا گیا کروڑوں روپے کیش برآمد کیا گیا ہے۔ملزم خواجہ وسیم کو گرفتار کر لیا گیا۔تحقیقات میں ملزم کے نام 22 کروڑسے زائد مالیت کے اثاثہ جات ہونے کے شواہد موصول ہوئے جن کے زرائع تاحال ملزم ثابت نہ کر سکا۔تحقیقات میں ملزم خواجہ وسیم کی اہلیہ کے نام 19 کروڑ سے زائد کیش و پرائز بانڈ ہونے کےشواہد بھی حاصل ہوئے۔ملزم خواجہ وسیم نے 2018 میں ایمنسٹی سکیم کا فائدہ اٹھاتے ہوئے کروڑوں روپے وائیٹ کیے۔اگرچہ وہ سکیم سے فائدہ حاصل کرنے کا اہل ہی نہ تھا۔ تحقیقات میں ملزم کے بینک اکاؤنٹس میں 2013 سے 2017 کے دوران 22 کروڑسے زائد سرمایہ بیرون ملک سے منتقل ہونے کا انکشاف بھی ہوا ہے۔ملزم کی جانب سے بیرون ملک سے منتقل ہونے والے سرمایہ کے زرائع تاحال ثابت نہ کئےجا سکے۔نیب حکام کی جانب سے ملزم خواجہ وسیم گرفتاری کے بعد احتساب عدالت کے روبرو پیش ہوئے،احتساب عدالت لاہور کی جانب سے ملزم خواجہ وسیم کا 24 ستمبر تک جسمانی ریمانڈ منظور کرلیا گیا۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.